اہل سنت کی مقدسات کی توہین کے فتوائے حرمت کو قانون بنانے کی تجویز

اہل سنت کی مقدسات کی توہین کے فتوائے حرمت کو قانون بنانے کی تجویز
kurdistantodyسنندج(کردستان نیوز+سنی آن لائن) ایران کے صوبہ کردستان کے علماءومشائخ اور عوامی تقاضوں کے بعد ”شورائے فرہنگ عمومی کردستان“ (جنرل کلچر کونسل) نے آیت اللہ خامنہ ای کے فتوے کو قانون کا حصہ بنانے کی تجویز دی ہے۔ حال ہی میں سپریم لیڈر نے فتوی دیا تھا کہ امہات المومنین اور اہل سنت والجماعت کی مقدسات کی توہین و گستاخی حرام ہے۔

کردستان میں آیت اللہ خامنہ ای کے خاص نمایندے نے کہا ہے کہ ایران میں مذہبی مقدسات کی توہین کے سدباب کیلیے مستقل قانون سازی کی ضرورت ہے۔ اس سلسلے میں ”جنرل کلچر کونسل کردستان“ کے ممبران نے سپیکر پارلیمنٹ کو ایک خط لکھا ہے کہ رہبر کے فتوے کو قانون کی شکل دی جائے۔
”سنی آن لائن“ کو موصولہ اطلاعات کے مطابق کونسل کے سربراہ حجت الاسلام موسیٰ موسوی سمیت دیگر ممبران نے اپنی تجویز کو عملی وقانونی شکل دینے پر زور دیا ہے۔ علاوہ ازایں مذکورہ کونسل کے اجلاس میں طے پایاگیا کہ آیت اللہ خامنہ ای کے فتوے کو قانونی حیثیت دلوانے کے حوالے سے سرکاری محکمہ ”ادارہ برائے اسلامی تبلیغات کردستان“ بھی اپنی سرگرمیوں کی رپورٹ اگلی میٹنگ میں پیش کرے۔
یاد رہے چند ہفتے قبل ایک کویتی شیعہ اسکالر نے لندن میں حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کے یوم الوفات کے موقع پر جشن بپا کرکے تقریب میں آپ رض کی شان میں گستاخی کی تھی جس سے عالم اسلام میں غم وغصے کی ایک لہر دوڑگئی۔ چند دن قبل آیت اللہ خامنہ ای نے ردعمل ظاہر کرتے ہوئے ازواج مطہرات اور سنی مقدسات کی توہین کو حرام قرار دیا۔

آپ کی رائے

Leave a Reply

Your email address will not be published.

مزید دیکهیں